KISSAN POST

ہرڑیاہلیلہ

 Chebulic myrobalan

ہرڑ یا      ہلیلہ

ہلیلہ یعنی ہرڑ ایک درخت کا پھل ہے۔ بے پناہ طبی اور شفائی خوبیوں کی وجہ سے اسے اکسیر کا درجہ حاصل ہے۔شمالی برِ صغیر میں اس کا درخت عام پایا جاتا ہے۔افغانستان میں بھی ہرڑ کادرخت کثرت سے ملتا ہے۔

ایک تحقیق کے مطابق جو  میکگل یونیورسٹی  کینیڈا میں  بھارٹھاکر اور آرنلڈ نے  کی .اسمیں انہوں نے دیکھا کہ تازہ ہریر میں سیب کی  نسبت دس فیصد زیادہ وٹامن سی ہوتی ہے اور چودہ فیصد زیادہ پروٹین جس کا نام لیسن ہے پایا جاتا ہے .اسمیں کاپر  پوٹاشیم مینگنیز ، سیلینیم اور آئرن پایا جاتا ہے . اور اگر کوئی 100 گرام اس پھل کا کھاے تو اسے روزانہ کی بتاے گئےان  منرلز     کی ضرورت پوری ہو جاتی ہیں .

حکما کہتے ہیں جس ملک میں یہ درخت ہو اس ملک میں کوئی بیماری نہیں رہ سکتی

جس مریض کی زبان ذائقہ محسوس نہ کرسکے قبض ہو یا دست آرہے ہوں‘ کھٹے ڈکار آتے ہوں‘ متلی قے آتی ہو ایک ہرڑ کو دھو کربِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم پڑھ کر منہ میں رکھ کر چوسیں ‘شروع میں کڑوی اور ترش لگے گی،چوسنے کا دل نہیں کرے گا مگر ہمت نہیں ہارنی جب چوستے چوستے صرف گٹھلی باقی رہ جائے گٹھلی باہر پھینک دیں اوپر سے ایک گلاس یا دو گلاس پانی پی لیں۔ آپ کے منہ کا ذائقہ میٹھا ہوجائے گا اور آپ ایک خاص قسم کی لذت محسوس کریں گے۔ چند منٹ بعد متلی قے رک جائے گی‘ کھٹے ڈکار آنا بند ہوجائیں گے دست رک جائیں گے اگر قبض ہوگی تو کھل جائے گی‘ دست ہونے کی صورت میں ہرڑ چوسنے یا کھانے کے بعد پانی نہ پیا جائے تو زیادہ بہتر ہے۔

بالوں کے لئے :

جو مرد یا عورت روزانہ ایک ہرڑ چوسے اس کے بال کالے رہیں گے اور جس کے سفید ہوں گے مزید سفید بال ہونا بند ہوجائیں گے جن مریضوں کے مسوڑھوں سے خون آتا ہو‘ دانت ہلتے ہوں‘ وہ روزانہ ایک ہرڑ چوسا کریں‘ ہرڑ چوسنے سے دانت ہلکے پیلے ہوجاتے ہیں اگر کچھ دیر بعد مسواک کر لیا جائے تو دانت پیلے ہونے سے محفوظ رہتے ہیں۔

معدے کے لئے :

: جن مریضوں کو معدے میں درد ہو، بلغم ہو، سینے میں جلن ہو، وہ روزانہ رات کو ایک گلاس پانی میں 2عدد پختہ ہرڑ بھگو دیں صبح نہارمنہ مٹی کی دوری کے اندر رگڑیں گٹھلی علیحدہ کرلیں وہی گلاس کا پانی جس میں رات کو ہرڑ کو بھگو کر رکھا تھا ملالیں۔ ایک شربت تیار ہوجائے گا آنکھیں بند کرکے پی لیں 15 یوم کے بعد بفظلہ تعالیٰ معدے کا درد معدے کی جلن، سینے کی جلن، بلغم، پیٹ کا درد ختم ہوجائے گا۔

حافظہ کے لئے

: جن طالب علموں کا حافظ کمزور ہو‘ وہ روزانہ ایک ماشہ ہرڑ کا سفوف تازہ پانی یا دودھ کیساتھ کھایا کریں۔ انشاء اللہ حافظہ قوی ہوجائے گا نازک مزاج مریض بجائے ہرڑ چوسنے یا سفوف کھانے کے ہرڑ کا مربہ استعمال کریں۔ مربہ ایک سال سے زائد عرصہ کا نہ ہو۔

بواسیر کے لئے

ہرڑ کے استعمال سے بادی بواسیر کا خاتمہ ہوجاتا ہے۔ یوں تو ہرڑ کا مزاج سودا وی ہے اور بواسیر سوداوی سے پیدا ہوتا ہے مگر اللہ کی قدرت ہے ہرڑ کے استعمال سے بادی بواسیر ختم ہوجاتی ہے۔

نزلہ زکام کے لئے :

نزلہ زکام کو ہرڑ ختم کرتا ہے اور نزلہ کی وجہ سے آنکھوں کی بینائی کمزور ہوگئی ہوتو روزانہ ہرڑ کے سفوف کو پانی میں بھگو دیں‘ ٹھیک 4گھنٹے بعد آنکھوں کو بھگوئے ہوئے پانی سے دھولیں ، ڈیڑھ سے 2ماہ تک آنکھوں کی بینائی واپس آجاتی ہے، نزلہ زکام کا خاتمہ ہوجاتا ہے۔

قبض  ختم کرنے کے لئے :

اگر کسی مریض کو دست آور دوا دینی ہو تو 5پانچ سے چھ ہریڑیں پونے چار ماشہ دار چینی کے ساتھ دس تولہ پانی میں 10منٹ تک جوش دے کر چھان کر صبح نہار منہ خالی پیٹ پلائیں‘ فوری دست آجائیں گے آنتیں صاف ہوجائیں گی غلیظ مادہ کا اخراج ہوجائے گا۔

چکر آنے کے لئے :

کسی مریض کو کمزوری یا کسی بھی وجہ سے سر میں چکر آتے ہوں ہرڑ اور چینی دونوں کا ہم وزن سفوف تیار کرلیں دن میں 3بار دو ماشہ کی مقدار پانی کے ساتھ استعمال کریں انشاء اللہ کچھ دنوں کے بعد شفاء کلی ہوجائے گی

ہرڑ کی اقسام:

ہرڑ تین قسم کی ہوتی ہے۔ ہلیلہ سیاہ یعنی کالی ہرڑ،دوسری قسم ہلیلہ زرد یعنی زرد رنگ کی ہرڑ۔ اور تیسری قسم کو ہلیلہ کابلی کہتے ہیں۔جو پھل گٹھلی پیدا ہونے سے قبل گر جائے اسے ہلیلہ سیاہ،کالی ہریڑ یاجنگ ہریڑ یا ہلیلہ زنگی بھی کہتےہیں

جب ہلیلہ نشونماپا کرغیر معمولی طور پرفربہ ہو جائےتو اسے کابلی ہریڑ کہتے ہیں۔

رنگ -زرد، بھورا اور سیاہ۔ذائقہ ۔ کسیلا مزاج۔ سرد درجہ اول، خشک درجہ دوم

مقدار خوراک ۔ جوشاندہ ، خسیاندہ 5 سے 7 ماشے ۔ سفوف ایک ماشہ

افعال و استعمال

1 ۔ ہرڑ برِصغیر کا مقامی درخت ہے ۔ اطبائ اسے زمانہ قدیم سے استعمال کرتے آ رہے ہیں ۔ قدیم اطبائ اسے اسہال پیچش سینے کی جلن ، ریاح، بدہضمی جگر اور معدہ کی خرابیوں میں استعمال کرتے آئے ہیں۔

2 ۔ ہلیلہ مقوی دماغ، معدہ اور جگرہے

3 ۔ ہرڑ کے پھل میں ایک مادہ کیبولینک ایسڈ ہوتا ہے جو قابض ہوتا ہے۔اس کے علاوہ اس میں ٹینک ایسڈ، کالک ایسڈ ، رال اور کچھ جلاب آور مادے پائے جاتے ہیں ۔

4 ۔ متعدد طبی فوائد کے ساتھ ہرڑ بنیادی طور پر معتدل، محفوظ اور فوری اثر رکھنے والی مسہل یا جلاب آور چیز ہے۔

5 ۔ ہرڑ رطوبات خشک کرنے، خون روکنے معدہ کے فعل کو تقویت دینے، خوراک کو ہضم کرنے اور جزوِ بدن بنانے اور جسم سے خارج کرنے میں جتنے بھی فعل یا نظام شامل ہیں ہلیلہ ان سب کو تقویت دیتی ہے اور انکی کی خرابیوں کو دور کرتی ہے۔

6 ۔ ہرڑ ایک زبردست ہیئر ٹانک ہے۔ پسی ہوئی ہرڑ کو ناریل کے تیل میں اس قدر ابالا جائے کہ اس کا جوہر پوری طرح تحلیل ہو جائے۔ اس تیل کو بالوں میں باقاعدگی سے لگانے سے بال گھنے اور مضبوط ہوجاستے ہیں۔

7 ۔ ہرڑ کے پانچ ذائقے ہیں۔ ترش، میٹھا، کڑوا ، چربرا اور کسیلا ۔ ترش ذائقہ سے سوداکو چریرے ذائقہ سے صفرا کو کڑوے اور کسیلے ذائقہ سے بلغم کو دور کیا جاتا ہے۔

ہرڑ کے گودے میں میٹھا، پتوں میں کھٹا چھال میں چریرا، ڈنڈی میں کڑوا اور گٹھلی میں کسیلا ذائقہ ہوتا ہے۔

8 ۔ ہرڑ دانتوں سے چباکر کھانے سے قوتِ ہضم میں اضافہ کرتی ہے۔پیس کر کھانے سے معدہ کو صاف کرتی ہے ، پکاکر کھایاجائے تو قبض کرتی ہے۔ بھون کر کھانے سے صفرا، سودا،صفرا اور بلغم تینوں کو دور کرتی ہے۔

9 ۔ ہلیلہ کو کھانے کے ساتھ کھانے سےحافظہ اور جسمانی قوت کو بڑھاتی ہے۔ پاخانہ اور پیشاب کے راستے گندے مادوں کو خارج کرتی ہے۔

10 ۔ ہرڑ کے سفوف سے وزن میں دو گنا مویز منقیٰ لے کر دونوں کو کھرل کرلیں۔جب دونوں یک جان ہو جائیں تو بھیڑے کے برابر گولیاں بنا لیں۔روزانہ صبح کے وقت ایک گولی استعمال کی جائے تو صفرا، امراضِ دل، خون کی خرابی،صفراوی بخار، یرقان، قے، کوڑھ اور کھانسی،غذا سے نفرت، جریان اپھارہ، اور پھنسیوں کیلئے مفید ہے۔

11 ۔ بد ہضمی میں ہرڑ کے سفوف میں مساوی الوزن مصری ملا کر استعمال کرنے قوتِ ہاضمہ بہت بڑھ جاتی ہے۔

12 ۔ ہرڑ کا سفوف بطور منجن دانتوں پر استعمال کرنے سے دانت صاف اور چمکیلے ہو جاتے ہیں اور کسی قسم کی شکایت پیدا نہیں ہوتی۔

13 ۔ ہریڑ بھیڑہ آملہ تینوں دو، دو تولے مصری 6 تولے ان سب کو عرق گلاب میں گھوٹ کر سات سات ماشے کی گولیاں بنا لیں بواسیر کیلئے نہایت مفید ہیں۔

14 ۔ ہرڑ کاسفوف شہد میں ملاکر استعمال کرنے سے جریان زائل ہو جاتا ہے۔

15 ۔ اطبا کا قول ہے ہرڑ ماں کی طرح پرورش کرتی ہے۔ ماں توکبھی خفا ہو جاتی ہے لیکن پیٹ میں گئی ہوئی ہرڑ کبھی خفا نہیں ہوتی۔ کھانا کھانے سے قبل استعمال کریں تو بھوک بڑھاتی ہے۔ کھانے کے بعد استعمال کیا جائے تو کھانے کو جلد ہضم کرتی ہے۔ گویا کہ ہرڑ ہر حالت میں مفید ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *